شراب نوشی اور ڈرگز نے سنجو بابا کو موت کے دہانے پر پہنچا دیا

سنجے دت عرف سنجو بابا کسی تعارف کے محتاج نہیں۔ بالی وڈ کی فلمی زندگی میں ایک ایسا شخص جس کی ذاتی زندگی میں کسی ایکشن فلم سے زیادہ ایڈونچر موجود ہے۔ یہ کوئی اور شخص نہیں صرف اور صرف سنجے دت ہے۔ سنجے کی زندگی میں رومانس ہے تو انتہا پر ہے، ایکشن ہے تو انتہا پر ہے، دبدبہ ہے تو اتنا ہے کہ مثال نہیں۔ پیسہ اور شہرت سنجے دت کے لیے کبھی مسئلہ نہیں رہا ۔ لیکن اب سنجے دت اپنی زندگی کے سب سے مشکل وقت سے گزر رہا ہے۔

سنجے دت کو پھیپھڑوں کا کینسر ہو گیا ہے اور اس کینسر کی تشخیص اس وقت ہوئی جب سنجے دت کو سانس لینے میں تکلیف کا مسئلہ ہوا۔ اسے اسپتال لے جایا گیا۔ شروع میں ڈاکٹروں کو لگا کہ شاید یہ کورونا کا کوئی مسئلہ ہے۔ لیکن کورونا کا کوئی ایشو نہیں تھا۔ بلکہ یہ کورونا سے کہیں زیادہ خطرناک معاملہ تھا۔ ڈاکٹروں نے سنجو کے ٹیسٹ کیے اور انہیں بتایا کہ وہ پھیپھڑوں کے کینسر میں مبتلا ہو چکے ہیں۔ پھیپھڑوں کا کینسر اور وہ بھی چوتھی اسٹیج یعنی آخری اسٹیج۔ سنجے دت اب علاج کے لیے امریکا جا رہے ہیں۔

سنجے دت کے کینسر کی یہ کہانی ان لوگوں کے لیے ایک اشارہ ہے جو یہ کہتے ہیں کہ کینسر کی ابتدائی طور پر تشخیص ہو جائے تو اس کا علاج ہو جاتا ہے۔ لیکن دیکھنے میں یہی آتا ہے کہ سنجے دت جیسا بااثر اور امیر آدمی بھی اس بات سے بے خبر رہتا ہے کہ اس کے اندر کینسر کا اژدھا نشوونما پا رہا ہے اور جب خبر ہوتی ہے تو پھیپھڑوں کا کینسر آخری اسٹیج پر پہنچ چکا ہوتا ہے۔

ہم نے سنجے  دت کا عروج دیکھا ہے۔ اس کی سڑک فلم سے لے کر آج تک سنجے دت کی زندگی کے ہر اچھے برے پہلو کے بارے میں پڑھا ہے۔ نوجوان نسل نے شاید سنجے دت کی اندولن فلم نہ دیکھی ہو۔ سڑک فلم نہ دیکھی ہو۔ امانت فلم نہ دیکھی ہو۔ یہ وہ وقت تھا جب سنجے دت بالی وڈ کا اکلوتا ایسا ایکشن ہیرو تھا۔ جب اس کا کوئی مدمقابل نہیں تھا۔ ہم سب سنجے دت کی فلم کا انتظار کرتے تھے۔ اور وی سی آر پر سنجے دت کی فلم دیکھنے کا خصوصی اہتمام کیا جاتا تھا۔ سنجے دت امریکا میں جا کر اپنے کینسر کا علاج کروائے گا اور امید ہے کہ وہ کینسر کے خلاف یہ جنگ جیت لے گا

Leave a Comment

Your email address will not be published. Required fields are marked *